• Expert By Experience

The Forgotten Generation: The Unsaid Mental Health Epidemic Amongst Elderly South Asians





Written by Asyia Iftikhar


A survey conducted by the UK Census in 2011 showed that 16.3% of the Indian, Bangladeshi and Pakistani community are aged 65 and over. Despite the elderly making up almost 20% of the South Asian population in the UK, it is this demographic that is overlooked both on a community and healthcare level, leading to widespread isolation and mental health problems. I sat down with Old Age Consultant Psychiatrist, Dr Rashda Tabassum, a leading clinician within the BAME community who has worked in the NHS for the past twenty two years, to gain a deeper understanding of the problems faced by elderly South Asians both within their communities and in the NHS.


Talking to Dr Tabassum, society appears to fail elderly South Asians at every level, resulting in these community members being left without adequate treatment. The first barriers to care are faced at the community level. There is a huge lack of education and discussion within the South Asian community about the existence of mental health problems. People with symptoms indicating illnesses ranging from depression to dementia are often ignored, their issues swept aside as ‘complaining’ or simply ‘being forgetful’ by their family. The idea of izzat (family honour) is integral in most South Asian cultures, meaning that out of fear of being shamed in their community many elderly people will withhold from talking about their health concerns, and family members will attempt to cover up their elders’ problems’.

Another issue that elderly South Asians face at the community level is the abandonment of traditional family structures. For many people in the older generation, the family structures they are used to from their culture include extended families living together. These living arrangements have slowly been abandoned in the past decade or so where younger generations have begun to adopt the western model of the ‘nuclear family’. Since the nuclear family model means that only immediate family members live in one household, the elderly are often left isolated and less frequently visited, leading to untreated mental health problems.


For these elderly people who are now living alone, depression is not the only concern. Alzheimer’s Disease is prevalent, but often goes unchecked. For those living alone or supporting themselves, this disease will begin to physically manifest itself through diet and health being increasingly neglected as they forget to eat, have their medicine or take care of their hygiene. Accompanying behavioural changes may also even result in aggression towards people who are trying to help them. It is when their health deteriorates that further action is taken and family members understand their elders need professional help.

This leads an elderly patient to see their GP, their first point of contact with the NHS.


As previously mentioned, many South Asian people will express their issues as physical health problems, such as fatigue and chronic pain and weight loss, which does not allude to their mental health concerns. This is often because they have not been taught how to articulate or identify mental health issues. This silence around mental health issues is compounded by the fact that GPs have not been given the training to recognise that expressions of physical ailments may be hiding deeper mental health problems. Many GPs also do not know how to handle different cultures and their attitudes when it comes to mental health diagnosis. As a result, the two most common outcomes after a visit to the GP is a dismissal of issues or miscommunication leading to a referral to the incorrect health department or specialist.


Dr Tabassum illustrated the ways in which a lack of cultural training for GPs can cause problems to patients through a real life example from her own experience. She spoke about a patient who was diagnosed with schizophrenia with paranoid delusion as a main symptom.


This patient, from a Sikh background, was asked why he was harassing his family. He replied that it was not unusual to check up on his family regularly, saying his behaviour was cultural, not psychotic. When asked why he kept a knife under his bed, he reported that it was part of a Sikh tradition. A lot of the symptoms of his illness seemed to be distortions of cultural practices. Although the way mental health presents itself is commonly linked with culture, regardless of which one someone is part of, diagnosis and treatment were hindered by his GP’s lack of education around culture and mental health. This example is one of many where doctors with no cultural training don’t fully understand the connection between culture and illness and how to tackle the symptoms appropriately.


This is not the only failing of our mental health services. Patients who are referred to mental health services experience what Dr Tabassum describes as ‘isolation manufactured by the healthcare system’. Dr Tabassum explained to me what she means when she told me about this isolation through an anecdote of a past patient. A retired South Asian doctor who suffered from severe depression was admitted to the psychiatric ward where Dr Tabassum worked. Due to his depression, he was unable to communicate fluently in English, creating a language barrier between patient and doctor. He was unable and unwilling to participate in ward activities, such as bingo, since they did not connect with his culture; and he stopped eating the pale and bland food given by the ward, causing weight loss. This all meant that his recovery from depression was incredibly slow and because of funding cuts, there was no interpreter that could be used to understand his needs.


In spite of how bleak this story is, Dr Tabassum believes there is a way we can improve our services and create greater prospects for all South Asian patients who are treated, but in particular elderly patients. The first step is to raise awareness of mental health in all areas of the South Asian community. For example, since many elderly people will spend a lot of time in religious buildings, and will sometimes confide in their religious leader as a regular point of contact, it is important that community religious leaders are educated on the topic. Even within schools, this education is important as children could then be more likely to recognise these symptoms in their parents or grandparents. With mental health still heavily stigmatised in South Asian communities, the more normalized conversation around mental health is, the more effective support can be given to those suffering with mental health issues.


The second step suggested by Dr Tabassum is that the Royal College of Psychiatry curriculum should include assessment training on ethnic minorities and increase competency to handle these cases. This will be most useful for the elderly community where miscommunication and misidentification of mental issues as physical symptoms are most likely to happen. GPs themselves should also be trained to be culturally competent, since they are the most likely the first health professionals patients will approach. Cultural competency can be as simple as teaching about different cultures and testimonies from South Asian doctors and patients as to how best to handle culturally sensitive cases.

Finally, the environment within psychiatric wards needs to be more culturally inclusive. For elderly patients who cannot speak fluent English, interpreters need to be readily available as well as more staff from the BME community, so they have people to speak to who understand their needs. There also needs to be a more culturally sensitive service provided for elderly people so they remain engaged, which has been proven to increase the likelihood of recovery. This could include more cuisines, a variety of entertainment and activities tailored to different cultures.


It is time this forgotten generation was heard, seen and supported with their mental health.


- Urdu Translation is below


ایک فراموش کردہ نسل: برطانیہ میں جنوبی ایشیائی بوڑھوں میں خاموشی سے سرایت کرتے ذہنی امراض


برطانیہ میں سنہ2011 میں کروای گئی مردم شماری کے مطابق جنوبی ایشیائی (بھارت،پاکستان اور بنگلادیش)نژاد شہریوں میں16.3فیصد افراد 65برس یا اس سے اوپر کی عمر میں پہنچ چکے ہیں۔باوجود آبادی کا اتنا بڑا حصہ ہونے کے، نہ تو جنوبی ایشیائی سماجی حلقوں میں اور نہ ہی صحت کے اداروں کی جانب سے اس طبقے کی صحت بارے کسی قسم کی تشویش کا اظہار کیا جا رہا ہے۔نتیجتا” ان بزرگوں کو بڑھتی ہوئی تنہائی اور نفسیاتی مسائل کا سامنا ہے۔اس صورت حال کے پیش نظر میں نے فیصلہ کیا کہ برطانیہ میں بزرگوں کی ذہنی صحت کے مسائل کا تجربہ رکھنی والے ماہرین سے کچھ راہنمائی لی جائے۔ چنانچہ میں نے اولڈ ایج کنسلٹنٹ اور ماہر نفسیاتی امراض ڈاکٹر راشدہ تبسم سے رابطہ کیا جو کہ نیشنل ھیلتھ سروس(NHS) کے توسط سے سیاہ فام، ایشیائی اور اقلیتی نسلوں سے تعلق رکھنی والے باشندوں(BAME community) کے ساتھ گذشتہ دو دہاہیوں کے عرصہ سے کام کر رہی ہیں اور اس سلسلے میں وسیع تجربہ کی حامل ہیں۔ مقصد یہ تھا کہ ڈاکٹر تبسم سے گفت وشنید کے ذریعے برطانیہ میں متذکرہ بالا اقلیتی طبقہ سے تعلق رکھنے والے بزرگ باشندوں کے ذہنی امراض اور ان کے حل کے حوالے سے این ایچ ایس میں موجود سہولیات کا بہتر فہم حاصل کیاجاسکے۔ڈاکٹر تبسم کے مطابق جنوبی ایشیائی بزرگ باشندوں کو ہر سطح پر نظرانداز کیے جانے کے رجحان کے نتیجے میں ان کی دیکھ بھال اور ذہنی امراض کے علاج کے حوالے سے مسائل میں اضافہ ہوتا چلا جا رہا ہے۔ان بزرگوں کی دیکھ بھال میں غفلت کا اولین مظاہرہ ان کے اپنے متعلقہ سماجی طبقے(اہل خانہ، رشتہ دار وغیرہ) کی سطح پر دیکھنے میں آتا ہے۔اس کی ایک وجہ یہ بھی ہو سکتی ہے کہ جنوبی ایشیائی باشندوں میں ذہنی صحت کے مسائل بارے عمومی معلومات کی کمی اور شعور کا فقدان پایا ہے،علاوہ ازیں ان کے نزدیک ذہنی امراض کا کوئی وجود ہی نہیں ( ان میں ابھی تک جنوں بھوتوں اور بدروحوں کا تصور کافی گہرا ہے) یوں وہ اس موضوع کو زیر بحث لانے سے بھی قاصر ہیں۔ذہنئی دباو سے لیکر یادداشت کے فقدان یا نسیان جیسے امراض کو اکثروبیشتر نظر انداز کرنے کے ساتھ ہی محض”شکایت کی عادت” اور “بھول جانے کا معمول” کہہ کر در خور اعتناہئ نہیں سمجھا جاتا۔ایک اور مسلۂ خاندانی عزت وقار کا بھی ہے کیوں کہ ذہنئی امراض کو قابل شرم سمجھ کر انہیں نہ صرف لوگوں سے چھپانے کی کوشش کی جا تی ہے بلکہ انہیں موضوع گفتگو بنانے سے احتراز کیا جاتا ہے۔ اس کہ علاوہ ایک مسلۂ روایتی اقدار سے انحراف کا بھی ہے کیونکہ جنوبی ایشیائی لوگوں میں روایتی خاندانی نظام تیزی سے ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو رہا ہے۔ پرانی نسل کے افراد کیلیے مربوط خاندانی نظام بہت اہمیت رکھتا تھا اب جب کہ مغربی انڈسٹریل معاشرے کے دباو کے سامنے یہ مشرقی اقدار دم توڑ رہی ہیں، بزرگ لوگ ذہنی کرب کا شکار ہونے کے نتیجے میں تیزی سے ذہنئی امراض کی لپیٹ میں آ رہے ہیں۔ کیونکہ وسیع خاندانی نظام کی جگہ مختصر واحد اکائی(nuclear)خاندانی نظام فروغ پا رہا ہی اس لیے ان بزرگوں کو نہ صرف سماجی بیگانگی کا سامنا ہے ان کی دیکھ بھال کے حوالے سے مسائل بڑھ رہے ہیں اور ان کے حل کے لیے کوئی مربوط کوشش بھی نہیں ہو رہی۔ان بزرگ ایشیائی لوگوں کا مسلۂ ، جو کہ اب تنہائی کی زندگی گذار رہے ہیں،محض ذہنئی دباو ہی نہیں بلکہ ان میں نسیان(الزئمر)یا حافظہ کی کمزوری جیسے امراض بھی تیزی سے بڑھ رہے ہیں جنہیں اکثر در خور اعتناہی نہیں سمجھا جاتا۔تنہائ کی زندگی گزارنے والے ان افراد میں نسیان جیسے امراض کا واضح اظہار اکثر ان کی جسمانی صحت سے ہوتا ہے،کیوںکہ ان بزرگوں کو اکثر اپنی خوراک اور ادویات وقت پر لینا یاد نہیں رہتا اور نہ ہی اردگرد کے ماحول اور خود اپنی صحت و صفائی کا ہوش رہتا ہے اس لیے ان کی حالت روزبروز خستہ ہوتی چلی جاتی ہے۔علاوہ ازیں اس صورت حال کے ساتھ رویوں میں آنے والی تبدیلی کے نتیجے میں ان لوگوں کو بھی ان بزرگوں کی جھنجھلاہٹ کا شکار بننا پڑ سکتا ہے جو کہ ان کی مدد کرنے کی کوشش کر رہے ہوتے ہیں۔ خاندان کے لوگوں کو ہوش اس وقت آتا ہے جب ان کی صحت حد سے زیادہ بگڑ چکی ہو تی ہے اور روایتی ٹوٹکے بھی کام نہیں آتے اور اس وقت پیشہ وارنہ معالج صحت سے رجوع کرنے کے سوا کو چارہ نہیں رہ جاتا۔جیسا کہ ذکر کیا جا چکا ہے کہ اکثر ایشیائی بوڑھوں میں ذہنئی امراض کی علامات ان کے جسمانی مساہل کی صورت میں ظاہر ہو تی ہیں،مثلاً تھکاوٹ اور درد کے متواتر احساس کے ساتھ ہی وزن میں کمی وغیرہ جو کہ ان کے ذہنئی اراض کا واضح اظہار نہیں کرتے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ انہیں اس امر کی تعلیم ہی نہیں جاتی کہ وہ ذہنئی امراض کا واضح طور پر ادراک کر سکیں۔ ذہنئی امراض کے مساہل سے چشم پوشی کے علاوہ ان کی شدت یا پیچیدیگئ کا اور سبب یہ ہے کہ عام معالجین میں ان امراض بارے تربیت کی کمی کہ نظر آنے والی خستہ جسمانی حالت کے پسپردہ ذہنئی عوارض جیسے محرکات کار فرما ہو سکتے ہیں۔ بہت سے معالجین میں ذہنئی عوارض کی تشخیص کے حوال سے مختلف ثقافتوں اور سماجی رویوں میں تفریق کرنے کی اہلئیت بھی موجود نہئں ہوتی ۔چنانچہ ایک معالج کے پاس جا کر معائنہ کروان کے عمومی طور پر دو نتائج ہو سکتے ہیں، ایک تو یہ کہ مسلے کا ادراک ہی نہ کیا جسے یا پھر غلط پیغام رسانی کے بعد مریض کو کسی غیر متعلقہ شعبہ صحت یو ماہر صحت کے پاس بھیج دیا جائے۔ڈاکٹر راشدہ تبسم نے ایسے غلط طریقوں کی نشاندہی کی جن کے تحت کسی معالج کی تربیت میں کمی کا نتیجہ مریض کیلیے مسائل کی برآمد ہو سکتا ہے۔ اس حوال سے انہوں نے چند مثالیں پیش کیں۔ انہوں نے ایک ایسے مریض کی مثال دی جو سکیزوفرینیاschizophrenia’)میں مبتلا ہونے کی وجہ سے انجانی وسوسوں(paranoia)کا شکار رہتا تھا۔جب اس مریض سے، جس کا تعلق سکھ برادری سے تھا، پوچھا گیا کہ وہ اپنے اہل خانہ کو خوفوہراس کا نشانہ کیوں بنا رہا تھا تو اس نے جواب دیا”اپنے خاندان کے افراد کی نقل وحرکت پر نظر رکھنا کو غیر معمولی عمل نہئیں” اور یہ کہ یہ عمل اس کی ثقافتی اقدار کا آئینہ دار ہے نہ کہ کسی ذہنئی مرض کا۔ جب اس سے یہ پوچھا گیا کہ وہ اپنے بستر کے نیچے کرپان کیوں رکھتا ہے کہ یہ سکھوں کی روایت ہے۔ اس کے مرض کی اکثر علامات اس کی ثقافتی روایات کی مسخ شدہ اشکال کی صورت میں ظاہر ہو تی تھی۔ اگرچہ ذہنئی مریض کا نا طٰہ اکثر و بیشتر ثقافت سے جوڑ دیا جاتا ہے، تاہم تشخیص اور علاج میں رکاوٹ کا عنصر عموماً معالج میں اس اہلئیت کا فقدان ہوتا جس کی بدولت وہ ذہنئی عوارض کا تعین کسی مخصوص ثقافت کے تناظر میں کر سکے۔یہ ایسی بہت سی مثالوں میں سے ایک مثال ہے جو اس حقیقت کی نشاندہی کرتی ہے کہ ثقافتی عوامل گے ادراک کی تربیت سے محروم معالجین ثقافت اور ذہنئی امراض کے ما بین ربط کی نشاندھی نہ کر سکنے کی بدولت علامات کی مناسب طریقے سے تشخیص کرنے اور یوں علاج کرنے میں ناکام رہتے ہیں۔ذہنئی صحت کے شعبے کی یہ واحد ناکامی نہئں ہے۔اس شعبے سے رجوع کرنے والے مریضوں کو ایک ایسی صورتحال سے دو چار ہونا پڑتا ہے جسے ڈاکٹر راشدہ تبسم “ شعبہ صحت کی اختراع کردہ تنہائی”کا عنوان دیتی ہیں۔اس کی وضاحت کرن کے لیے انہوں نے ایک واقعہ سنایا۔ ان کے مطابق ذہنئی دباو کے شکار جنوبی ایشیا سے تعلق رکھنے والے ایک ریٹاہرڈ ڈاکٹر کر ذہنئی/نفسیات امراض کے وارڈ میں لایا گیا، جہاں ڈاکٹر تبسم فرائض انجام دے رہی تھیں۔ ذہنئی دباو کے باعث وہ روانی سے انگلش بولنے سے قاصر تھا،جس کے نتیجے میں نہ صرف مریض اور کلینیکل سٹاف کے درمیان با معنی گفتگو تقریبا” ناممکن تھی، علاوہ ازیں وارڈ میں ہونے والی سرگرمیوں مثلاً بنگش”Bingo” وغیرہ میں شرکت کرنے سے نہ صرف معذور بلکہ ناراض تھا کیونک یہ سب اس کی ثقافت سے مطابقت نہیں رکھتی تھیں۔ اس کے علاوہ اس نے بےرنگ اور بے ذائقہ قسم کی خوراک کھانے سے بھی انکاری ہی گیا جو اس کو ہسپتال میں مہیا کی جاتی تھی اور یوں کچھ عرصے میں وزن میں کمی کا بھی شکار ہو گیا۔اس صورتحال کی بدولت ذہنئی دباو سے صحتیابی کا عمل سست روی کا شکار ہو گیا۔ مالی وسائل میں کمی کی وجہ سے ہمہ وقت مترجم کی سہولت بھی دستیاب نہ تھی، جس کو اس کی ضروریات کو سمجھنے کیلیے معاوضے پر رکھا سکتا۔اس مشکل صورت حال کے باوجود ڈاکٹر تبسم کا یقین ہے کہ ایسے طریقے موجود ہیں جن کو بروےکار لا کر ہم خدمات کے معیار میں اضافہ کرنے کے ساتھ ساتھ ذہنئی امراض کے شکار ان تمام جنوبی ایشیائی باشندوں بلخصوص معمر افراد کیلئے بہتر مواقع فراہم کرنے کے قابل ہو سکتے ہیں۔اس حوالے سے اولیں قدم جنوبی ایشیاء سے تعلق رکھنے والے تمام سماجی طبقات میں ذہنئی صحت کے مسائل کا شعور اجاگر کرنا ہو گا۔مثال کے طور پر چونکہ معمر افراد اپنا زیادہ تر وقت مذہبی مقامات پر گذارتے ہیں اور اپنے مذہبی رہنماؤں پر اعتماد کرتے ہیں اس لیے متعلقہ مذہبی رہنماؤں کی اس حوالے سے تعلیم و تربیت بہت اہمیت رکھتی ہے۔اسی طرح سکولوں میں بچوں کو بھی اس حوالے سے تربیت دینا ضروری ہے تاکہ وہ اپنے والدین یا دادا/دادی، نانا/نانی میں ذہنئی عوارض کی علامات کو شناخت کرنے کے قابل ہو سکیں۔اس کہ علاوہ چونکہ جنوبی ایشیائی کلچر میں ذہنی مرض کو باعث شرم سمجھا جاتا ہے اس لیے اس حوالے سے گفتگو کو معمول کی گتفگو کے طور پر اجاگر کرنا ایک موثر عمل ثابت ہو گا جس کی بدولت ذہنئی امراض کا شکار افراد کی بہتر معاونت ہو سکے گی۔ڈاکٹر راشدہ تبسم نے اس حوالے سے دوسری اہم تجویز پیش کی وہ یہ ہے کہ برطانیہ کے رائل کالج آف سئکائٹرسٹس کو اپنے نصاب میں “نسلی اقلیتوں میں ذہنئی امراض کی تشخیص “بارے تربیت شامل کرنے کے ساتھ ایسے مسائل سے نبٹنے کی اہلئیت میں اضافے کے حوالے سے بھی اقدام کرنے چاہیں۔ یہ اقدامات معمر افراد کے ان حلقوں میں زیادہ مفید ثابت ہوں گے جہاں بات چیت میں رکاوٹ سے غلط تشخیص کے امکانات بہت زیادہ ہوتے ہیں۔ علاوہ ازیں عام معالجین(GPs) کا ثقافتی معاملات کے حوالے سے تربیت یافتہ ہونا ضروری ہے اکثر مریضوں پہلے ان سے رابطہ کرتے ہیں۔ ثقافتی علامات کی مہارت/اہلیت اتنی سادہ قسم کی مہارت ہے جس کو باآسانی حاصل کیا جا سکتا ہے۔ آخری بات یہ کہ ذہنی امراض کے وارڈن کا ماحول ثقافت دوست ہونا چاہیے اور ان معمر افراد کیلے، جو انگریزی نہیں بول سکتے،مترجم کی ہمہ وقت موجودگی ضروری ہے اس کے ساتھ ہی سیا فام ، ایشیائی اور نسلی اقلیتوں(BAME)سے تعلق والے عملے کی تعداد میں اضافہ بھی تاکہ مریض ان سے بات چیت کر سکیں جو ان کی ضروریات کا ادراک کر سکیں۔ علاو ازیں ثقافتی حوالے سے زیادہ حساس خدمات کی فراہمی کی بھی ضرورت ہے تاکہ معمر ایشیائی افراد کو بیگانگی کا احساس نہ ہو اور یوں ان کی

جلد صحت یاب ہو سکی۔ اس کے علاوہ مختلف ثقافتوں کی عکاسی کرنے والے کھانوں، تفریحی پروگراموں کی فراہمی اور دیگر سرگرمیوں کا فروغ بھی ضروری ہے۔ وقت آگیا ہے کہ اس فراموش کردہ نسل کو سنا اور دیکھا جائے اور ان کے ذہنئی عوارض کے علاج میں معاونت کی جسے۔

مترجم: اعزاز باقر


547 views
 

©2020 by Expert By Experience : Mental Health.